اردوئے معلیٰ

Search

وہ تاب و تواں عقلِ بشر لائے کہاں سے

ہو عہدہ بر آ نعتِ شہِ کون و مکاں سے

 

پوشیدہ نہیں یہ نگہِ دیدہ وراں سے

سب عقل و تمیز آئی ہے انساں کو کہاں سے

 

خورشیدِ درخشاں نہ مہِ جلوہ فشاں سے

روشن ہے خدائی یہ شہنشاہِ زماں سے

 

روپوش ہوا جب سے جہانِ گزراں سے

نزدیک ہوا اور بھی وہ حجلۂ جاں سے

 

ہیگل سے میں پوچھوں نہ فلاں سے نہ فلاں سے

منزل مری روشن ترے قدموں کے نشاں سے

 

معراج میں گزرے ہیں وہ شاید کہ یہاں سے

اک گرد سی اڑتی ہے ابھی کاہ کشاں سے

 

پیارا نہیں مجھ کو وہ فقط باپ سے ماں سے

لاریب وہ محبوب ہے اپنی رگِ جاں سے

 

دعویٰ محبت ہو اگر شاہِ شہاں سے

بچ سوءِ عمل، سوءِ زباں، سوءِ گماں سے

 

خاص ایک دعا یہ ہے مری ربِ جہاں سے

پہنچائے مدینہ پہ نہ لوٹائے وہاں سے

 

پیوست ہے ہر لفظِ سخن اپنی جگہ پر

مسحور ہیں جیسے کہ ترے حسنِ بیاں سے

 

محفوظ ہے در صورتِ قرآن و احادیث

نکلا جو کلام آپ کی پاکیزہ زباں سے

 

چپ چپ بھی دکھائی دے تو خاموش نہ سمجھیں

پڑھتا ہے درود ان پہ نظرؔ دل کی زباں سے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ