آہِ دل بے اثر نہیں آتی

آہِ دل بے اثر نہیں آتی

کیا ہُوا لوٹ کر نہیں آتی

 

خانۂ دل تمام ہے تاریک

روشنی کیا ادھر نہیں آتی

 

دل کو آتا ہے جس قدر رونا

کیوں ہنسی اس قدر نہیں آتی

 

شعلۂ غم بھڑک اٹھے مجھ کو

منّتِ چشمِ تر نہیں آتی

 

روکشِ بت ہے آئینہ دل کا

صورتِ شیشہ گر نہیں آتی

 

معصیت ہے ترا وتیرۂ زیست

کچھ حیا اے نظرؔ نہیں آتی

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ