اردوئے معلیٰ

Search

آہٹ ہوئی کہ آمدِ سرکار ہو گئی

گل کھل گئے تو روح بھی سرشار ہو گئی

 

رخصت ہوئی جو تیرگی جگمگ ہوئی فضا

کُھل کر پھر آج بارشِ انوار ہو گئی

 

ہم عاصیوں کے بگڑے مقدر سنور گئے

ہم پر نگاہِ سیدِ ابرار ہو گئی

 

مرجھا چکا تھا غم سے مری زیست کا شجر

اس کی ہر ایک شاخ ثمر بار ہو گئی

 

یادِ نبی کو جب سے ہے دل میں بسا لیا

بے رنگ زندگی گل و گلزار ہو گئی

 

جب بھی تڑپ کے عرض کی آقا بلایئے

پھر ناز تیری حاضری ہر بار ہو گئی

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ