اردوئے معلیٰ

اب شبِ غم اگر نہیں نہ سہی

دامنِ برگ تر نہیں نہ سہی

 

زندہ دارانِ شب کو میری طرح

انتظارِ سحر نہیں نہ سہی

 

دشت پیما کے آس پاس اگر

کوئی دیوار و در نہیں نہ سہی

 

عام ہے جستجوئے جہلِ خرد

شہر میں دیدہ ور نہیں نہ سہی

 

ہر نفس ایک تازیانہ ہے

آہ میں کچھ اثر نہیں نہ سہی

 

موت ہے مستقل تعاقب میں

زندگی خود نگر نہیں نہ سہی

 

سر اٹھا کر زمیں پہ چلتا ہوں

سر چھپانے کو گھر نہیں نہ سہی

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات