اردوئے معلیٰ

Search

اترے وہ اِس طرح مرے خواب و خیال میں

رونق سی لگ گئی دلِ آشفتہ حال میں

 

حسنِ شہِ عرب کی ہیں تابانیاں جدا

خورشید تیرتا ہے رخِ پُر جمال میں

 

فیضان ہے یہ ناخنِ پائے حضور کا

یونہی کشش نہیں ہے وجودِ ہِلال میں

 

جب دیکھتے تھے شہرِ نبی اٹھتے بیٹھتے

دن کام کے وہی تھے مرے ماہ و سال میں

 

پھونکیں حسد کی جس کو نہ ہر گز بُجھا سکیں

محوِ سفر وہ نور ہے حضرت کی آل میں

 

کیسے بھلا سمجھ لوں تجھے خود سا اِک بشر

جب کہ کثافتیں ہیں مرے بال بال میں

 

کر دیجئے حضور تبسم کہ حشر میں

بدلے جلالِ ذاتِ الٰہی جمال میں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ