اتنا بڑھا بشر، کہ ستارے ہیں گردِ راہ

اتنا بڑھا بشر، کہ ستارے ہیں گردِ راہ

اتنا گھٹا، کہ خاک پہ سایہ سا رہ گیا

ہنگامہ ہائے کارگہِ روز و شب نہ پوچھ

اتنا ہجوم تھا ، کہ میں تنہا سا رہ گیا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ