اسم اللہ، میری جاگیر

اسم اللہ، میری جاگیر

میں ہوں بڑا امیر کبیر

 

نامِ خدا تن من میں سمایا

سنور گئی میری تقدیر

 

دل میں یاد خدا کی ہر دم

لب پر نعرۂ تکبیر

 

خواب ڈراؤنے دیکھ ڈرا ہوں

الٹی کرے اللہ تعبیر

 

معاف کرے گا میرا اللہ

میری خطا، میری تقصیر

 

بات ہر اک محبوبِ خداؐ کی

آیۂ قرآں کی تفسیر

 

حمد، خدا کی شان کی مظہر

نعت، ظفرؔ کی پُر تاثیر

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

لکھوں پہلے حمدِ علیِ عظیم
آئی صبا ہے کاکلِ گل کو سنوار کے
ہے سلطانوں کا ایک سلطان ​
خُدا کا ذِکر دِل میں، آنکھ نم ہے
خُدا کی عظمتوں کا ذکر کرنا
خدائے مہرباں کی ذاتِ باری
خدا کی حمد لکھنا، نعت کہنا
خدا سے دِل لگی جب تک نہ ہو گی
نہیں ہے دل رُبا کوئی خدا سا
خدا کا ذکر جس دل میں سمائے