اردوئے معلیٰ

Search

اس سے پہلے کہ لہو چشمِ وفا سے پھوٹے

کوچہِ خواب سے میں کیوں نہ کنارہ کر لوں

 

تم وہ بے حس کہ مزاقاً مری تذلیل کرو

میں وہ لاچار کہ ہر بار گوارا کر لوں

 

روح کہتی ہے کہ یہ منزلِ مقصود نہیں

جسم کہتا ہے بہرحال گزارا کر لوں

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ