اس طرف بھی اک نظر مہر درخشانِ جمال

اس طرف بھی اک نظر مہر درخشانِ جمال

ہم بھی رکھتے ہیں بہت مدت سے ارمانِ جمال

 

تم نے اچھوں پہ کیا ہے خوب فیضانِ جمال

ہم بدوں پر بھی نگاہِ لطف سلطانِ جمال

 

اک اشارے سے کیا شق ماہِ تاباں آپ نے

مرحبا صد مرحبا صَلِّ علیٰ شانِ جمال

 

تیری جاں بخشی کے صدقے اے مسیحائے زماں

سنگریزوں نے پڑھا کلمہ ترا جانِ جمال

 

کب سے بیٹھے ہیں لگائے لو در جاناں پہ ہم

ہائے کب تک دید کو ترسیں فدایانِ جمال

 

فرش آنکھوں کا بچھائو رہ گزر میں عاشقو

ان کے نقش پا سے ہوگے مظہر شانِ جمال

 

مرکے مٹی میں ملے وہ نجدیو! بالکل غلط

حسب سابق اب بھی ہیں مرقدمیں سلطانِ جمال

 

گرمیٔ محشر گنہگارو! ہے بس کچھ دیر کی

ابر بن کر چھائیں گے گیسوئے سلطانِ جمال

 

کرکے دعویٰ ہمسری کا کیسے منہ کے بل گرا

مٹ گیا وہ جس نے کی توہین سلطانِ جمال

 

حاسدانِ شاہِ دیں کو دیجئے اخترؔ جواب

در حقیقت مصطفیٰ پیارے ہیں سلطانِ جمال

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

جب گلشن حیات میں سرکار آ گیے
بر سرم کوہِ گناہے یارسولﷺ
عبیر و عنبرِ سارا کو دیدے مات کیا کہیے
کیسے لکھ پائیں تری مدحتِ نعلین ابھی
حصارِ خیر میں رکھی رہیں صدائیں سب
اُبھر رہی ہے پسِ حرف روشنی کی نوید
ہے وادی بطحا کی فضا اور طرح کی
انسان سے کیا کام بھلا ہو نہیں سکتا
مہر نہ روشن تم سے سوا کچھ ماہ نہ تاباں تم سے زیادہ
مرے لبوں پر کسی گھڑی جب ثنائے خیر الانام آئے