اللہ اللہ کون ہو گا مرتبہ دانِ حسینؓ

اللہ اللہ کون ہو گا مرتبہ دانِ حسینؓ

کیا مرا منہ ہے کہ لکھوں مدحت و شانِ حسینؓ

 

ہے زمانہ اک زمانے سے ثنا خوانِ حسینؓ

مدح کوئی کر سکا لیکن نہ شایانِ حسینؓ

 

سامنے آنکھوں کے آیا روئے تابانِ حسینؓ

وہ لبِ یاقوت اور وہ دُرِّ دندانِ حسینؓ

 

ورطۂ حیرت میں دل از دیدِ چشمانِ حسینؓ

تیر ہوں پیوستۂ دل اف وہ مژگانِ حسینؓ

 

شام ہے جس پر فدا وہ زلفِ پیچانِ حسینؓ

صبحِ روشن ہو تصدق وہ گریبانِ حسینؓ

 

تربیت پائی ہے واللہ زیرِ دامانِ رسول

اس لئے ہم سب ہیں دامن گیرِ دامانِ حسینؓ

 

ہے مصافِ کربلا ان کی شہادت گاہِ شوق

نقشِ دل ہے آج تک کارِ نمایانِ حسینؓ

 

کارواں چھوٹا سا اہلِ کارواں لیکن بڑے

اصغر و اکبر بھی من جملہ فدایانِ حسینؓ

 

خورد سال عون و محمد شاملِ اہلِ جہاد

دو یہ تھے ننھے سپاہی جاں نثارانِ حسینؓ

 

ڈھال شمشیریں فرس خیمے پیادے کچھ سوار

کل یہی تھا کربلا میں ساز و سامانِ حسینؓ

 

سرفروشی سے لڑے کچھ اس طرح یہ سب کے سب

ورطۂ حیرت میں تھے سب بد سگالانِ حسینؓ

 

الغرض کام آئے سارے در مصافِ کربلا

لٹ گیا اس دشت میں سارا گلستانِ حسینؓ

 

جاں فروشی سے انہیں کی رنگ ہے اسلام میں

ہے تن آور نخلِ دیں اب تک بہ فیضانِ حسینؓ

 

ختم کرتا ہے نظرؔ اپنا بیاں اس قول پر

تا قیامت ہے مسلمانوں پہ احسانِ حسینؓ

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ