اردوئے معلیٰ

Search

اُن لبوں تک اگر گیا ہو گا

شعر میرا نکھر گیا ہو گا

 

ترکِ الفت نہیں تھی خو اُس کی

میری حالت سے ڈر گیا ہو گا

 

اعتباراُس کے دل سے دنیا کا

جانے کس بات پر گیا ہو گا؟

 

زہر پینے سے کون مرتا ہے

کوئی غم کام کرگیا ہو گا

 

پاؤں اٹھتے نہیں دوانے کے

کوئی زنجیر کر گیا ہو گا

 

برگ جھڑتے ہیں آنسوؤں کی طرح

موسمِ گل گزر گیا ہو گا

 

کتنا نکلا ہے سخت جاں یہ ضمیر

ہم تو سمجھے تھے مر گیا ہو گا

 

ناؤ ڈوبے مری زمانہ ہوا

اب تو دریا اُتر گیا ہو گا

 

تذکرہ میرا اُس کی محفل میں

سب کو خاموش کرگیا ہو گا

 

بازی ہارا ہے کب عدو سے ظہیرؔ

کچھ سمجھ کر ہی ہَر گیا ہو گا

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ