اُن کی جب بات چلی خوب چلی کیا کہنے!

اُن کی جب بات چلی خوب چلی کیا کہنے!

ظُلم کی رات ڈھلی خوب ڈھلی کیا کہنے!

 

اُن کی چوکھٹ سے صبا آئی بہاریں لائی

ہر کلی دِل کی کِھلی خوب کِھلی کیا کہنے!

 

حَرف کو بخت لگے، نعت ہوئی لب پہ رواں

نور کی شمع جلی خوب جلی کیا کہنے!

 

میرے سرکار کے آنے سے ہدایت کی مَہک

ساری دُنیا کو مِلی خوب مِلی کیا کہنے!

 

لب پہ آنے سے فقط نام نبی کا اعلیٰ

میری مشکل ہے ٹلی خوب ٹلی کیا کہنے!

 

اُن کی باتوں سے شعور آیا جہالت گہ میں

اُن کی ہر بات بھلی خوب بھلی کیا کہنے!

 

ایک میں ہی نہیں دُنیا ہے سوالی اُن کی

اُن کی ہے شان جلی خوب جلی کیا کہنے!

 

جن کو آقا نے چُنا فاطمہ زہرا کے لیے

ایسے اعلیٰ ہیں علی خوب علی کیا کہنے!

 

نام لیوا ہے رضاؔ جو بھی نبی کا سچّا

وہی رب کا ہے ولی خوب ولی کیا کہنے!

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ