آنکھیں کھلیں تو مائلِ پندار کیوں ہوئے

آنکھیں کھلیں تو مائلِ پندار کیوں ہوئے

غفلت ہی ہم کو خوب تھی ہشیار کیوں ہوئے

 

پوچھا یہ کیا ؟ ہمارے طلبگار کیوں ہوئے

یہ کہیے آپ اتنے طرحدار کیوں ہوئے

 

غافل یہ شرحِ عشق کی گر پیروی نہیں

منصور جیسے زیب سرِ دار کیوں ہوئے

 

حیرت نے کی زباں جو دمِ عرض حال بند

بولے کہ چُپ ترے لبِ اظہار کیوں ہوئے

 

دیکھا جو پھول دستِ نگارین یار میں

کھاتے ہیں خار ، خار ، کہ ہم خار کیوں ہوئے

 

نکلے نہ تم مکان سے باہر کبھی مگر

مشہورِ شہر و کوچہ و بازار کیوں ہوئے

 

وہ پوچھتے ہیں وقتِ عیادت یہ بار بار

تم میری آنکھ دیکھ کے بیمار کیوں ہوئے

 

دس بیس خم شراب کے خالی کیے نہ کیوں ؟

زاہد ذرا سی پی کے سیہ کار کیوں ہوئے

 

کیسا ستم لے کے مرا دل یہ پوچھنا

مجبور آپ کیوں ہوئے ناچار کیوں ہوئے

 

ظالم نے حلق پر سے اٹھا لی یہ کہہ کے تیغ

تم آپ قتل ہونے کو تیار کیوں ہوئے

 

وعدہ تھا مجھ سے خلوتِ عیش و نشاط کا

تم آج زیبِ محفلِ اغیار کیوں ہوئے

 

موسیٰ و برقِ طور کا قصہ سُنا نہیں ؟

کیا پوچھتے ہو طالبِ دیدار کیوں ہوئے

 

جب کچھ نہیں تمیز سیاہ و سفید میں

ہم محو عشق زلف و رُخِ یار کیوں ہوئے

 

جب تجھ میں شاہدِ ازلی کی نہیں ہے شان

تیرے مطیع کافر و دیندار کیوں ہوئے

 

ان کو یہ شوق ہے کہ بڑھائیں ستم کی مشق

ہم کو یہ رنج ہے وہ دل آزار کیوں ہوئے

 

عُشاق کو مزا نہیں ملتا جو عشق میں

دنیا کی لذتوں سے وہ بیزار کیوں ہوئے

 

انگلش زبان ہی سے جو نا آشنا ہو تم

اے فوقؔ پھر ایڈیٹرِ اخبار کیوں ہوئے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ