آپ کی یادوں سے جب میری شناسائی ہوئی

آپ کی یادوں سے جب میری شناسائی ہوئی

دل کی دھرتی پر خوشی کی بزم آرائی ہوئی

 

آپ کے حُسنِ صباحت کے سُنے جب تذکرے

آنکھ یہ میری زیارت کی تمنائی ہوئی

 

لب پہ آنے سے فقط اک الصلٰوۃ والسلام

دل میں میرے شادمانی اور رعنائی ہوئی

 

آپ کو دیکھا ہے جس نے اُس نے حق دیکھا حضور

بات سچی آپ کی ہے آپ فرمائی ہوئی

 

حضرتِ صدیق و فاروق و علی ، عثمان سے

آپ کے دیں کی خلافت کی بھی زیبائی ہوئی

 

آپ کی نعتیں پڑھی جب بھی رضاؔ نے یانبی

ہر طرف سے خوب ہی اس کی پذیرائی ہوئی

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

وہ کیا جہاں ہے جہاں سب جہاں اترتے ہیں
عکس روئے مصطفی سے ایسی زیبائی ملی
تو سب سے بڑا، تو سب سے بڑا، سبحان اللہ، سبحان اللہ
درِ نبی پہ نظر، ہاتھ میں سبوۓ رسولؐ
مصیبت میں پڑے ہیں ، اَنْتَ مَوْلٰنَا
سلام اس پر، کہ نام آتا ہے بعد اللہ کے جس کا
ہر آنکھ میں پیدا ہے چمک اور طرح کی
کیا پیار بھری ہے ذات ان کی جو دل کو جِلانے والے ہیں
نوری محفل پہ چادر تنی نور کی ، نور پھیلا ہوا آج کی رات ہے
کافِ کن کا نقطۂ آغاز بھی تا ابد باقی تری آواز بھی

اشتہارات