اردوئے معلیٰ

آپ کے آنے کی دیتا ہے خبر، دیدئہ تر

آپ کے آنے کی دیتا ہے خبر، دیدئہ تر

منعکس کرتا ہے اِک رخنۂ در، دیدئہ تر

 

ایک تو پاؤں کے بوسے کو ہے یہ جادئہ دل

ناز فرمانے کو ہے جائے دگر، دیدئہ تر

 

آپ آئیں تو چمک اُٹھے بہ عکسِ طلعت

بندہ پرور یہ مرا رشکِ قمر، دیدئہ تر

 

تابِ نظّارہ نہیں، پھر بھی بہ شوقِ خاطر

صاف رکھتا ہے بہت صحنِ بصر، دیدئہ تر

 

حرفِ بے مایہ نہیں ہے کہ بکھر جائے کہیں

منزلِ شوق کا ہے رختِ سفر، دیدئہ تر

 

پورے احساس کو دیتا ہے تری دید کا لمس

رکھتا ہے ایک جُداگانہ اثر، دیدئہ تر

 

جیسے پانی میں ہو خواہش کا کوئی عکس رواں

گنبدِ سبز اُدھر اور اِدھر دیدئہ تر

 

دل پہ تو پھُول بکھرتے ہیں بہ رنگِ مدحت

سینچتا ہے تری یادوں کا شجر، دیدۂ تر

 

مصرعِ نعت میں جُڑتے ہیں بصد عجز و نیاز

قطرہ قطرہ جو لُٹاتا ہے گُہر، دیدئہ تر

 

وہ نظر ہو تو نمو پاتا ہے دیدار کا رَس

ساعتِ خاص کا ہے فیضِ نظر، دیدئہ تر

 

اِک توجہ کے ہیں مقصودؔ یہ مشتاقِ کرم

دستِ گُل، کاسۂ لب، شوقِ بشر، دیدئہ تر

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ