اردوئے معلیٰ

Search

اپنی متاعِ خواب مرے نام کر گیا

اک شخص شہر ہجر میں گمنام مر گیا

 

ترکِ جنون کر کے بیاباں سے گھر گیا

بازی نبردِ عشق کی دیوانہ ہر گیا

 

اِس رقص گرد بادِ غم روزگار میں

ہر جامۂ لحاظ بدن سے اتر گیا

 

سورج کو سر پہ لاد کے دن بھر چلا تھا میں

اُس کو فصیلِ شام پہ چھوڑا تو گھر گیا

 

شاخِ گلاب شعلۂ لرزاں لگی مجھے

پروردۂ خزاں تھا بہاروں سے ڈر گیا

 

اک حرفِ بے شرف کہ کوئی بولتا نہ تھا

بولا گیا تو شہر صداؤں سے بھر گیا

 

ہر جوہر حیات ہوا صرفِ اندمال

اک زخم بھرتے بھرتے مرا کام کر گیا

 

قدموں سے راستے گئے رہبر کی آس میں

رہبر ملے تو ہاتھ سے رختِ سفر گیا

 

جرم وفائے یار کے مجرم بھی ہم ہوئے

الزامِ خود سری بھی ہمارے ہی سر گیا

 

در پر ترے جھکے تو زمانہ ہوا خلاف

چھوٹا سا ایک کام بڑا نام کر گیا

 

پھر سے زمین ہے کسی وارث کی منتظر

گرد و غبارِ وقت میں آدم بکھر گیا

 

ایسے ملے سرابِ مسلسل کہ اب ظہیرؔ

تشنہ لبی تو ہے مگر احساس مر گیا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ