اردوئے معلیٰ

اگر دل میں یادِ مدینہ رہے گی

منور ترے دل کی دنیا رہے گی

 

تمنا کرے گا جو ان کی گلی کی

مہک دار بزم تمنا رہے گی

 

جہاں کو ہمارے نبی کی ضرورت

ہمیشہ رہی ہے ہمیشہ رہے گی

 

بڑھاتا ہے رب العلیٰ ان کی عظمت

وہ اعلیٰ تھی ، اعلی ہے ، اعلیٰ رہے گی

 

نبی کے غلاموں میں گنتی ہے میری

یہ پہچان ہی میرا طرہ رہے گی

 

صبا لاتی رہنا مدینے کی خوشبو

کلی میرے دل کی شگفتہ رہے گی

 

ثنائے نبی کی ردا اوڑھو انجمؔ

سر حشر بن کر یہ سایہ رہے گی

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات