ایمان کی مے، عشق کے گوہر مرے مولا

ایمان کی مے، عشق کے گوہر مرے مولا

صدقے میں شہ دیں کے عطا کر مرے مولا

 

حالات کے ماروں پہ کرم کر مرے مولا

کر مفلس و بے کس کو تونگر مرے مولا

 

مہتاب ترے ذکر کا اترے مرے گھر میں

اے کاش مرا گھر ہو مرا گھر مرے مولا

 

یہ عز و شرف میری بھی تقدیر میں لکھ دے

میں چوم لوں دہلیزِ پیمبر مرے مولا

 

ہر پل رہوں مشغول تری حمد و ثنا میں

جیسے یہ ثمر، پیڑ یہ پتھر مرے مولا

 

خوشبو مرے آقا کے نواسوں کی عطا کر

انفاس مرے کر دے معطر مرے مولا

 

دے جذبہ اخلاص و وفا اور زیادہ

کر ذوقِ عبادت بھی فزوں تر مرے مولا

 

اک سانس بھی ایسی مری قسمت میں نہ لکھنا

جو تیری اطاعت سے ہو باہر مرے مولا

 

رکھے ہیں شہنشاہوں نے سر اسکے قدم پر

ہو جس کو ترا قرب میسر مرے مولا

 

دن رات کرے حمد، لکھے نعت و مناقب

ہوجائے یہ احسان صدف پر مرے مولا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

میں تیرا فقیر ملنگ خدا
تو اعلیٰ ہے ارفع ہے کیا خوب ہے​
اے میرے مولا، اے میرے آقا، بس اپنے رستے پہ ڈا ل دے توُ
جانوں ترا جلال سنہرے ترے اصول
خداوندا! مرا دل شاد کر دے
کرے آباد گھر سُنسان میرا
محبت خلق سے رب العلیٰ کی
میں عاصی پُر خطا ہوں اور تو ستّار بھی غفار بھی ہے
صدائے کن فکاں اللہ اکبر
خدا ہم درد و مُونس مہرباں ہے

اشتہارات