اے کاش! مِلے مجھ کو رسائی تِرے دَر کی

اے کاش! مِلے مجھ کو رسائی تِرے دَر کی

کرتا ہی رہوں مدح سرائی تِرے دَر کی

 

سچ ہے کہ محبت میں تِری عظمتِ کونین

شاہی سے بھی بڑھ کر ہے گدائی تِرے دَر کی

 

ہر اِک پہ کرم، لطف و عطا، جود و سخا بھی

یہ بات مجھے خوب ہی بھائی تِرے دَر کی

 

اللہ نے دَر خیر کے کھولے ہیں اُسی پر

’’تھی جس کے مقدّر میں گدائی تِرے دَر کی‘‘

 

یہ بادِ صبا فضل سے تیرے ہی کسی دن

اے کاش! کرے راہنمائی تِرے دَر کی

 

اِس واسطے برسات ہے انوار کی مجھ پر

تصویر مِرے دِل میں سمائی تِرے دَر کی

 

آواز بھی اُونچی نہ ہو دربار میں تیرے

تعظیم ہمیں رب نے سکھائی تِرے دَر کی

 

قُربت کی نظر ڈال اے سلطانِ دو عالم

جاں لے، لے گی ورنہ یہ جدائی تِرے دَر کی

 

اُس دِن سے رضاؔ نعت ہی کہتا ہے مسلسل

جس دِن سے ہے سوغات یہ پائی تِرے دَر کی

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

مشکلوں میں پکارا کرم ہی کرم
فاصلوں کو تکلف ہے ہم سے اگر ، ہم بھی بے بس نہیں ، بے سہارا نہیں
تمہیؐ سرور تمہیؐ ہو برگزیدہ یارسول اللہؐ
اگر میں عہد رسالت ماب میں ہوتا
جان ہیں آپؐ جانِ جہاں آپؐ ہیں
ہر موج ہوا زلف پریشانِ محمدؐ
رشکِ ایجاب تبھی حرفِ دعا ہوتا ہے
قصہء شقِّ قمر یاد آیا​
ہم گداؤں بے نواؤں کا سہارا آپ ہیں
گھڑی مڑی جی بھر آوندا اے ۔ پنجابی نعت