اردوئے معلیٰ

Search

بابِ شاہِ عرب ہے چلے آئیے

یہ جھجک بے سبب ہے چلے آئیے

 

پَرفشاں ہے یہاں رحمتِ کرِدگار

جو بھی دل میں طلب ہے چلے آئیے

 

رحمت و عافیت دلکشی بخششیں

یاں انوکھی ہی چھب ہے چلے آئیے

 

کہہ رہی ہے فضائے حرم مرحبا

تم پہ احسانِ رب ہے چلے آئیے

 

یاد کرکے گناہوں کو کیوں رُک گئے

دِل اگر بااَدب ہے چلے آئیے

 

گھر بلایا ہے تم کو کریں گے عطا

اِن کا ارفع نسب ہے چلے آئیے

 

اے مجسم خطا پیکرِ معصیت

بند انعام کب ہے چلے آئیے

 

ہو عنایت شکیلِؔ خزیں پر شہا

اب تو یہ جاں بلب ہے چلے آئیے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ