اردوئے معلیٰ

Search

شاخِ شب پر کوئی مہتاب شگوفہ پُھوٹا

اور مہک پھیل گئی سرمئی خاموشی کی

آسمان سے کوئی بے نام ستارہ ٹُوٹا

نیم خوابیدہ شجر نے کوئی سرگوشی کی

 

چاند خاموش تھا، یک لخت صدا دینے لگا

کروٹیں لیتی ہوئی نیند سے بیدار ہوئی

وقت یکدم کسی آہٹ کا پتہ دینے لگا

دامنِ کوہ سے بدلی سی نمودار ہوئی

 

گھور گھنگور گھٹا لائی گھنیرے بادل

مہرباں پانی گلی کُوچوں میں ٹِپ ٹِپ برسا

دل کے اُس پار ہوئی کوئی عجب سی ہلچل

اور رگ و پَے میں تری یاد کو کوندا لپکا

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ