اردوئے معلیٰ

باغِ سخن نہ ہوگا اس کا خزاں رسیدہ

حصے میں جس کے آیا سرکار کا قصیدہ

 

وہ میرے مصطفی ہیں وہ میرے مصطفی ہیں

کامل ہے جن کی سیرت اوصاف ہیں حمیدہ

 

ہے اتباعِ آقا، وجہِ فلاح عالم

امت کو زہرِ قاتل افکار ہیں جدیدہ

 

سرکار کی اطاعت، اللہ کی اطاعت

اعلان کر رہا ہے تاریخ کا جریدہ

 

سلمان فارسی کی قسمت پہ جاؤں قرباں

انمول ہو گیا وہ، تو نے جسے خریدا

 

آقا کریم آقا، آقا رحیم آقا

عصیاں کے بوجھ سے ہے میری کمر خمیدہ

 

جیسی تڑپ ہو ویسی ہوتی ہے مہربانی

آجائے گا، بلاوا گر قلب ہے تپیدہ

 

بعد از خدا ہیں میرے آقا بزرگ و برتر

ایماں یہی ہے میرا، میرا یہی عقیدہ

 

عادت صدف ہو جس کی صلِ علی کا نغمہ

ہرگز کبھی نہ ہوگا رنجیدہ و کبیدہ

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات