اردوئے معلیٰ

Search

بخت میں ایسی کوئی شام نہ ہو

ساتھ تجھ جیسا خوش خرام نہ ہو

 

چل پڑوں میں انا کے رستے پر

یہ سفر عمر بھر تمام نہ ہو

 

ملنے آ جانا میرے بنجارے

جب محل میں کوئی غلام نہ ہو

 

چل پڑیں لوگ جانبِ دریا

اور کشتی کا اہتمام نہ ہو

 

ہجر تا عمر ساتھ رہ جائے

یہ رفاقت بھی چند گام نہ ہو

 

مذہبِ عشق کی شریعت میں

مجھ پہ اے شخص تو حرام نہ ہو

 

کر دعا ، میرے دل میں تیرے خلاف

صرف نفرت ہو ، انتقام نہ ہو

 

والہانہ ہو عشق کومل سے

یونہی رسمی دعا سلام نہ ہو

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ