اردوئے معلیٰ

Search

بے شک تھے علیؓ تابعِ احکامِ خلیفہ

جب تک نہ ملی آپؓ کو فی الاصل خلافت

ہر ایک خلیفہ کے رہے تابعِ فرماں

تھی بس یہی اسلام کے اظہار کی صورت

جب پائی خلافت تو نہ بدلا کوئی قانون

تھی نہجِ خلافت پہ علیؓ کی بھی حکومت

حسنینؓ نے پائی تھی علیؓ سے یہی تعلیم

تائید کریں اس کی جو اچھی ہو حکومت

جب طرزِ خلافت کو بدل دے کوئی حاکم

پھر اس کو بتانا ہے کہ کیا شے ہے صداقت

کردارِ حسنؓ مرضیِ آقا کے قریں تھا

کی آپؓ نے جب دستِ معاویہّؓ پہ بیعت

 

تاحینِ حیات انؓ کے رہے تابعِ فرماں

شبیرؓ بھی تھے واقفِ اسرارِ خلافت

تبدیل ہوئی طرزِ خلافت تو وہ نکلے

با قصدِ جہاد! اور وہاں پائی شہادت

اس طرزِ حسینیؓ میں ہے پوشیدہ یہ نکتہ

تھی دین کے منہاج پہ ہر ایک حکومت

یعنی جو خلافت تھی ابوبکرؓ و عمرؓ کی

عثمانؓ و علیؓ کی تھی اسی طرح خلافت

اقدارِ سلف سے متصادم نہ تھی مطلق

قبضے میں معاویہّؓ کے جب تک تھی امارت

بدلی جو ملوکِیَّتِ موروثی میں وہ بھی

شمشیر اُٹھانے کی پڑی انؓ کو ضرورت

تاریخ میں لکھ مارا ہے اشرار نے جو کچھ

لاریب نہیں میرے لیے وہ کوئی حجت

حجت ہے فقط حکمِ رسولِ دوسریٰ ہی

لازم ہے کروں سارے صحابہؓ کی میں عزت

انجم ہیں صحابہؓ ہی شہِ کون و مکاں کے

پاتے ہیں مسلمان صحابہؓ سے ہدایت

 

اصحابؓ کہ اولادؓ کہ ازواجِؓ شہِ دیں

ہیں سب ہی مسلماں کے لیے لائقِ عزت

وہ شخص کُھلا دین کا دشمن ہے یقینا

کرتا ہے جو ان سب میں کسی کی بھی مذمت

ہو دل میں مسلمان کے ہر ایک کی توقیر

لازم ہے کرے دل سے ہراک سے وہ محبت

احسنؔ دلِ زندہ میں محبت ہے سبھی کی

جس جس کو مقدر سے ملی شاہ کی قربت

 

کردارِ حسینیؓ: اتوار: ۲۳؍رمضان المبارک ۱۴۳۳ھ… ۱۲؍اگست ۲۰۱۲ء
یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ