اردوئے معلیٰ

تجھ سے ہے بہار جانِ عالم

اے چارہء بے کسانِ عالم

 

تو اصلِ بنائے خلق ٹھہرا

تو عز و وقار و شانِ عالم

 

سدرہ ترے خادموں کا مسکن

اے خواجہ ءِ خواجگانِ عالم

 

مہکی نہ تھی بوئے خلق جب تک

ویران تھا گلستانِ عالم

 

جب تک ترے ذکر سے تہی تھا

بے رنگ تھی داستانِ عالم

 

تارے ترے ہمرکاب آئے

اے صاحبِ کاروانِ عالم

 

قطرے ترے فیض سے سمندر

اے منعم و مہربانِ عالم

 

ذرے ترا نام لے کے اٹھے

اور بن کے گے کہکشانِ عالم

 

اک تیری نظر سے ہو گئے ہیں

بے نام و نشاں ، نشانِ عالم

 

در پر ترے آ کے جھک گئے ہیں

کیا کیا سر سر کشانِ عالم

 

بھٹکے گا شعور مدتوں تک

معراج ہے امتحانِ عالم

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ