ترا لطف و کرم بے انتہا ہے

ترا لطف و کرم بے انتہا ہے

تُو مخلوقات کا حاجت روا ہے

 

مرا تیرے سوا کوئی نہیں ہے

مجھے تیرے کرم کا آسرا ہے

 

عبث ڈھونڈا کیا دیر و حرم میں

خدا میرے دل و جاں میں بسا ہے

 

کرے نامِ خدا دل میں چراغاں

مرے کانوں میں بھی رس گھولتا ہے

 

جو نیکی کر تو دریا میں بہا دے

تو اپنی نیکیاں کیوں تولتا ہے

 

نمازوں میں خدا کو دیکھ تُو بھی

تجھے تیرا خدا تو دیکھتا ہے

 

فنا فی اللہ جو ہو خود کو مٹا دے

ظفرؔ عاشق وہی تو با خدا ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

پیش نگاہ خاص و عام، شام بھی تو، سحر بھی تو
تُوں دُنیا دے باغ دا
خدا ہے روشنی جھونکا خدا ہے
پُر لطف زندگی ہے مری لاجواب ہے
اسم اللہ، میری جاگیر
اذانوں میں صلوٰتوں میں، خدا پیشِ نظر ہر دم
خدا کی ذات پر ہر انس و جاں بھی ناز کرتا ہے
خدا موجود ہر سرِ نہاں میں
خداوندِ شفیق و مہرباں تو
خدا کا نام میرے جسم و جاں میں