تماشا ختم ہوا اے تماشا گر خاموش

تماشا ختم ہوا اے تماشا گر خاموش

کہ موت سامنے ہے اب تو میرے ڈر خاموش

 

فلک کے چاند اترنا ہے، تو اتر خاموش

کہ میرا صحن ہے خاموش، میرا گھر خاموش

 

یہاں پہ کوئی بھی سچ سن کے رہ نہیں سکتا

اے میرے ہونٹو! رہو چپ، مرے ہنر! خاموش

 

کہ ناخدا کو دلاؤ نہ اس طرح سے طیش

الٹ نہ جائے یہ کشتی ارے بھنور! خاموش

 

کہ میرے جسم کو آہٹ تلک سنائی نہ دے

تو میری روح میں اس طرح سے اتر خاموش

 

اگر نہیں ہے وہ طاہر تو ہو گا اور کوئی

ترے ستم پہ رہا ہے، جو عمر بھر خاموش

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ