تو اعلیٰ ہے ارفع ہے کیا خوب ہے​

تو اعلیٰ ہے ارفع ہے کیا خوب ہے​

تو سچا ہے پیارا ہے محبوب ہے​

 

تجھے ڈھونڈتا ہوں میں شام و سحر​

میں طالب ہوں، تو میرا مطلوب ہے​

 

نہ کیوں آئے پیتے ہی رگ رگ میں جاں​

کہ ذکرِ الہٰی کا مشروب ہے​

 

سو میرے سخن کا ہے محور ثنا​

مجھے بس تری حمد مرغوب ہے​

 

تو خالق ہے مالک ہے غالب ہے تو​

یہ بندہ ہے عاجز ہے مغلوب ہے​

 

تو کامل ہے اکمل ہے بے عیب بھی​

یہ ناقص ہے خاطی ہے معیوب ہے​

 

ترے در پہ نادم کھڑا ہے اثرؔ​

معافی گناہوں کی مطلوب ہے​

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ