اردوئے معلیٰ

Search

تو خدا ہے خدا ، تو کہاں ، میں کہاں

میں ہوں بندہ ترا ، تو کہاں ، میں کہاں

 

تو ہی معبود ہے ، تو ہی مسجود ہے

میں ہوں وقفِ ثنا ، تو کہاں ، میں کہاں

 

نور ہی نور ہے ذاتِ باری تری

خاک سے میں بنا ، تو کہاں ، میں کہاں

 

کیا حقیقت مری ، میں فنا ہی فنا

تو بقا ہی بقا ، تو کہاں ، میں کہاں

 

خالق و خلق کے بیچ موجود ہے

اک بڑا فاصلہ ، تو کہاں ، میں کہاں

 

تیرے اوصاف کا کب احاطہ ہوا

تو گماں سے سوا ، تو کہاں ، میں کہاں

 

تیرے اسرارِ پنہاں سمجھنے سے ہے

ذہن عاجز مرا ، تو کہاں ، میں کہاں

 

تو مخاطب ہے شام و سحر اور میں

بے زباں ، بے نوا ، تو کہاں ، میں کہاں

 

میری اوقات کیا ، ہے نبی بھی مرا

نام لیوا ترا ، تو کہاں ، میں کہاں

 

کیا ملائک ترے ، کیا فراغِؔ حزیں

سب کی ہے یہ صدا ، تو کہاں ، میں کہاں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ