تو ہست تو ہی بود، تیری ذات لاشریک ​

تو ہست تو ہی بود ، تیری ذات لا شریک

دائم ترا وجود ، تیری ذات لا شریک​

 

تو رازق و کریم ، تیرا نام کبریا

ہم ہیں تیرے حمود ، تیری ذات لا شریک​

 

پروردگار خالق و پست و بلند تو

بے بندش و قیود ، تیری ذات لا شریک​

 

یہ ساری کائنات ، تیری کن فکاں کا نقش

ہر نقش خوش نمود ، تیری ذات لا شریک​

 

رنگ ظہور میں ترے امکان و عرش گم

بے سمت ، بے حدود تیری ذات لا شریک​

 

انساں کی کیا مجال تیری رحمتوں سے ہے

ہر عقد کی کشود ، تیری ذات لا شریک​

 

بھٹکے جو تیری راہ سے غارت ہوئے تمام

کیا عاد ، کیا ثمود ، تیری ذات لا شریک​

 

میرے لئے ہی اشہد ان لا الٰہ کا ورد​

سرمایۂ سعود تیری ذات لا شریک​

 

ہیں شش جہت سے نغمہ ٔ وحدت کی بارشیں

بے بربط و سرود تیری ذات لا شریک​

 

آئینۂ مشاہدۂ غیب تیرا عکس

گنجینۂ شہود تری ذات لا شریک​

 

تیرے لئے رکوع بھی ، میرا قیام بھی

تو لائق سجود تیری ذات لا شریک​

 

ہے با وضو قلم بھی کہ لکھتا ہوں تیری حمد

تو ر رب ہست و بود تیری ذات لا شریک​

 

توفیق دے فضاؔ کو کہ تیرے حبیبﷺ پر

پڑھتا رہے درود تیر ذات لا شریک ​

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

میں تیرا فقیر ملنگ خدا
تو اعلیٰ ہے ارفع ہے کیا خوب ہے​
حمد و ثنا سے بھی کہیں اعلیٰ ہے تیری ذات
دردِ دل کر مجھے عطا یا رب
شعور و آگہی، فکر و نظر دے
خدا اعلیٰ و ارفع، برگزیدہ
خدا مجھ کو شعورِ زندگی دے
میں بے نام و نشاں سا اور تو عظمت نشاں مولا
خدا ہی بے گماں خالق ہے سب کا
خدا آفاق کی روحِ رواں ہے