اردوئے معلیٰ

Search
سرکار کے دو مبارک اسماء ” مَرفوع (جس کو بلندی دی گئی) ” اور "رافع(بلند کرنے والا ، اُٹھانے والا ) ” کو ایک ساتھ بطور ردیف نظم کیا گیا۔

 

تُو ہر غم کا دافِع اے مَرفوع و رافِع !

عَذابوں سے مانِع اے مَرفوع و رافِع !

 

بَہ فکرِ ثنا سو نہ پاؤں تو سمجھوں

ہے بیدار طالِع اے مَرفوع و رافع !

 

رَفَعنا سے مَرفوع ہے ذکر تیرا

گِروں کا تو رافع اے مَرفوع و رافع !

 

خسارے ہیں تیری دُکاں پر مُبَدّل

بَہ شکلِ مَنافِع اے مرفوع و رافع !

 

عدو کیا بگاڑے کہ جب ربِّ قادر

ہے تیرا مُدافِع اے مرفوع و رافع !

 

تو ہے مَقطعِ نظمِ وحی و رسالت

تو جانِ مَطالِع اے مرفوع و رافع !

 

تُو مَتبوعِ مُطلق ہے ایسا کہ تیرے

رُسُل بھی ہیں تَابع اے مرفوع و رافع !

 

تِری سمت راجع ہیں اے مرجعِ کُل

مَآخِذ ، مَراجع اے مرفوع و رافع !

 

ہوں جارِ گنہ سے میں مَجرور لیکن

تِرا عَفو رافِع اے مرفوع و رافع !

 

تجھے سجدہ ہوتا ، مگر شرع تیری

ہے سَدِّ ذرائِع اے مرفوع و رافع !

 

اے جانِ مسیحا ! تِری رہ کا ذرّہ

مریضوں کا نافع اے مرفوع وہ رافع !

 

حسین ایسا تجھ کو بنایا کہ خود ہے

مُحِب تیرا صانِع اے مرفوع و رافع !

 

شفیعِ معَظّم لقب ، یعنی تُو ہے

معظمؔ کا شافِع اے مَرفوع و رافع !

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ