اردوئے معلیٰ

Search

جب بھی گھیرا ہے دُکھوں نے تو ثنا خوانی کی

بہرِ تسکین درودوں کی فراوانی کی

 

لاکھ پردوں میں ترا حسن چھپایا رب نے

کوئی بھی مثل نہیں پیکرِ نورانی کی

 

ان کی دہلیز سے ہے ربط اگر غم نہ کرو

اُن کے ہوتے ہوئے کیا بات پریشانی کی

 

جس سفینے پہ ترا اسمِ مبارک دیکھا

اُس کی طوفان نے خود آکے نگہبانی کی

 

سب سلاطینِ جہاں بول اُٹھے حشر کے دن

ہائے افسوس کہ کیوں نہ تری دربانی کی

 

اِک نظر ڈال دے اے شاہِ عرب منگتے پر

اور تصویر بدل دے مری ویرانی کی

 

اپنے آقا کی غلامی پہ سدا ناز رہے

آخرت میں بھی سند ہے یہی سلطانی کی

 

آپ کا پیارا ملا دولتِ کونین ملی

اب مجھے فکر کہاں بے سرو سامانی کی

 

دیکھ کر کیسے انوکھے ہیں فدائی تیرے

کفر تصویر بنا بیٹھا ہے حیرانی کی

 

رفعتِ نقشِ قدم ڈھونڈ سکے ناممکن

اتنی پرواز کہاں تختِ سلیمانی کی

 

ایسے مومن کیلئے قربِ نبیکی ہے نوید

تنگ دستوں کیلئے جس نے بھی آسانی کی

 

آپ سے پہلے تو بچھڑا رہا انساں رب سے

سجدہ ریزی کہاں قسمت میں تھی پیشانی کی

 

تیرے اصحابؓ کی تاریخِ بشر میں آقا

کوئی بھی مثل نہ مل پائے گی قربانی کی

 

دعویِٰ عشق نہ کرنا کبھی اشکوں کے عوض

تجھ سے لاکھوں نے شکیلؔ ایسی ہی نادانی کی

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ