جب ثنائے پاک میں ہوتا ہوں گرمِ جستجو

 

جب ثنائے پاک میں ہوتا ہوں گرمِ جستجو

منصرف رکھتا ہوں دل کو از جہانِ چار سو

 

ایک بحرِ بیکراں وہ میں ذرا سی آبجو

لکھ نہیں سکتا ہوں مدحت میں بقدرِ آرزو

 

نرم خو، سنجیدہ فطرت، خوش جبیں، آئینہ رو

طرفہ سیرت، خوش ادا، شیریں کلام و خوش گلو

 

ربِ دو عالم نے خود توصیف فرما دی ہو جب

خلقِ پاکیزہ پہ اس کے کیا کریں ہم گفتگو

 

زلفِ سنبل سے کہیں خوش تر وہ زلفِ مشک بو

آبِ گوہر گم بروئے رشتۂ دندان اُو

 

جو چلے بر نقشِ پائے مصطفیٰ وہ سرخرو

مژدۂ رب ان کو فی جنّٰت عدنٍ اُدخلوا

 

نرم خوئی، پاک بینی، پارسائی، عبدیت

ان اداؤں پر نثار اس کے جہانِ رنگ و بو

 

جب وہ آیا آدمیت تھی دریدہ پیرہن

اس نے کی بخیہ گری اس نے کیا کارِ رفو

 

ہے طریقِ عشق میں مسلک یہی اے ہم نشیں

بھیجئے اس پر درودِ پاک ہو کر با وضو

 

وہ امام الانبیاء ہے وہ حبیبِ کبریا

ذکر اس کا چار سو ہے نام اس کا کو بکو

 

ساقیا اک جام اس عاجز نظرؔ کو حشر میں

جام تیرا، حوض تیرا، مالکِ کوثر ہے تو

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

جُز غمِ ہجرِ نبیؐ ہر غم سے ہوں ناآشنا​
شاعری کے ماتھے پر ان کی بات مہکے گی
دل میں ہو یاد تیری گوشہ تنہائی ہو
مدینہ دیکھ کر دل کو بڑی تسکین ہووے ہے
اے شہرِ علم و عالمِ اسرارِ خشک و تر​
پڑا ہوں سرِ سنگِ در مورے آقا
اس کو نہ چھو سکے کبھی رنج و بلا کے ہاتھ
آقاﷺ کی محبت ہی مرے پیشِ نظر ہو
جُود وعطا میں فرد،وہ شاہِؐ حجاز ہے
جب بھی پہنچا ہوں آقاؐ کے دربار تک