اردوئے معلیٰ

Search

جب شعر ہُوا اسمِ محمد سے مُرصّع

قرطاس ہُوا طلعتِ بے حد سے مُرصّع

 

کونین کو ہے حاجتِ نعلینِ مقدس

مابین بھی ہے لطف گہِ ید سے مُرصّع

 

تب جا کے مِلا اشرفِ تخلیق کا منصب

جب خَلق ہُوئی تیرے اب و جد سے مُرصّع

 

ہر ایک تمدّن تری سیرت سے ہی اجلا

تہذیب ترے سروِ قدُس قد سے مُرصّع

 

کیا جھُومے گی اُس منظرِ دلکش میں مری قبر

ہو جائے گی جب آپ کی آمد سے مُرصّع

 

آنکھوں کو ہے اب خواہشِ دیدارِ مدینہ

دل پہلے سے ہے آپ کی مسند سے مُرصّع

 

مسجد ہے ترے گنبدِ اخضر سے منقّش

روضہ ہے ترے حُجرۂ مرقد سے مُرصّع

 

میثاق تو تھا آپ کی نصرت کا وظیفہ

مجلس ہوئی تھی آپ کے مقصد سے مُرصّع

 

معراج سے اِک یہ بھی تھا مقصودؔ خدا کا

ہو عرش بھی دیدِ رخِ احمد سے مُرصّع

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ