اردوئے معلیٰ

Search

جس کو اپنا رخِ زیبا وہ دکھا دیتے ہیں

مسکرا کے وہ اندھیروں کو مٹا دیتے ہیں

 

ہم سے تیّاریِ محشر کا اگر پوچھے کوئی

ہم اسے آپ کی اِک نعت سنا دیتے ہیں

 

سرمہِ خاکِ درِ یار لگانے والے

آنکھ اٹھاتے ہیں تو محشر بھی اٹھا دیتے ہیں

 

ہادئ کون و مکاں ! آپ کے منظورِ نظر

شہرِ لاہور سے کعبہ بھی دکھا دیتے ہیں

 

اُس کی قربت کا تمنائی ہے سدرہ کا مکیں

اپنی قربت میں جسے آپ جگہ دیتے ہیں

 

سختئِ موت بھی اُن سب کو ڈرا سکتی نہیں

جو صدا آپ کو بر وقتِ قضا دیتے ہیں

 

رنگت و بوئے گلستان و وجودِ شبنم

مل کے سب تیرے تبسم کو دعا دیتے ہیں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ