اردوئے معلیٰ

Search

جہانِ شوق کے ہر زاویے کو با شرَف رکھا

رخِ قلب و نظر ہم نے مدینے کی طرف رکھا

 

حضورِ شاہِ خوباں کچھ نہیں تھا عرضِ مدحت کو

بجز حرفِ تشکر، جس کو ہم نے صف بہ صف رکھا

 

خبر تھی شاہِ ناقہ دار کے تشریف لانے کی

دلِ بے خود کی دھڑکن کو برنگِ صوتِ دف رکھا

 

بہ یک چشمِ عنایت اُن کو آتا ہے گُہر کرنا

اِسی خواہش میں خود کو ہم نے تصویرِ خزف رکھا

 

میانِ ذہن و دل کھِلتے رہے تسکین کے غُنچے

مدینے کے سوا ہر اِک تصور بر طرف رکھا

 

ترے شہرِ کرم میں تھا عنایت کا عجب منظر

دعا تھی بر لبِ لرزاں، عطا کو زیرِ کف رکھا

 

بہت اندیشہ تھا جذبوں کے بے اظہار مصرف کا

سخن کے بام پر بس نعت گوئی کا شغف رکھا

 

ہر اک دھڑکن ہوئی محوِ سلامِ شوقِ بے پایاں

جو نقشِ نعلِ شاہِ دوسَرا سینے سے لف رکھا

 

مریدانِ شہِ غوث الوریٰ مقصودؔؔ ! بے غم تھے

سرِ محشر حوالہ ہی ’’مُریدی لاَتخَف‘​‘​ رکھا

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ