جہانِ چار سُو چمکے، فضائے اندروں مہکے

جہانِ چار سُو چمکے، فضائے اندروں مہکے

بہ فیضِ مدحتِ خواجہ، خزاں زادہ فزوں مہکے

 

تمھاری نعت لکھ لکھ کر تمنا سبز رکھتا ہُوں

تمھارا نام لے لے کر مرا حالِ زبوں مہکے

 

مدینے سے ملی ہے دل کو کیسی بے کراں نکہت

وہاں سے لَوٹ تو آیا ہے لیکن جُوں کا تُوں مہکے

 

بدل ڈالا تری آمد نے یکسر منظرِ ہستی

عجب شانِ ترفّع تھی زبوں مہکے، نگوں مہکے

 

کھِلے ہیں نُطق کی ٹہنی پہ مدحت کے گُلِ خنداں

مرا منظر کسی بھی موسمِ گُل کے بِدوں مہکے

 

نسب میں رکھتا ہوں میں نسبتِ حسنین کی خوشبو

رگ و پَے میں نہ کیوں اُٹھ اُٹھ کے میری موجِ خُوں مہکے

 

خزاں آثار ہے فصلِ اجابت اے گلِ یزداں

اِدھر بھی موجۂ نکہت، کہ بختِ واژگوں مہکے

 

میں ہوں گوشہ نشینِ وادیٔ جلوہ گہِ رحمت

ہزاروں عقل زادوں کا جہاں آ کر جنوں مہکے

 

ترے ہی نطق سے چہکے ہیں شاخِ ہست کے طائر

ترے انفاس سے ہی اَوّلون و آخروں مہکے

 

نمودِ جلوئہ مطلق نہیں تُو قیدیٔ امکاں

عوالم تیرے ہونے سے دروں مہکے، بِرُوں مہکے

 

کبھی مقصودؔ وہ ماہِ شبِ اسریٰ اُتر آئے

مرے دل کے اُداس آنگن کی شامِ بے سکوں مہکے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ