اردوئے معلیٰ

Search

حضرتِ عثمانؓ کے ذوقِ عبادت کو سلام

زیر شمشیرِِ عدو ان کی تلاوت کو سلام

 

تیرے حلم و بُرد باری کی نہیں ملتی نظیر

عجز کے پیکر ترے عجزِ طبیعت کو سلام

 

کہہ دیا سرکار نے عثمانؓ میرا ہے رفیق

مرحبا عثمانؓ تیری اس رفاقت کو سلام

 

دین کی خاطر دیا ہے مال و زر دل کھول کر

منبعِ جود و سخا تیری سخاوت کو سلام

 

جُز نبی کے نا کیا عثماںؓ نے کعبہ کا طواف

آپ کی اس بے ریا ، بے لوث اُلفت کو سلام

 

بیٹیاں دومصطفٰی کی عقد میں تیرے رہیں

مرحبا صد مرحبا اس اعلیٰ نسبت کو سلام

 

کشت و خوں شہرِ نبی میں ہو، گوارا ہی نہیں

پی لیا جامِ شہادت ، اس شہادت کو سلام

 

آسمانوں کے فرشتے بھی کریں تیرا حیا

پیکرِ شرم و حیا تیری شرافت کو سلام

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ