خدا کی کبریائی ہے جہاں تک

خدا کی کبریائی ہے جہاں تک

جمالِ مصطفائی ہے وہاں تک

خدا بندے کی شہ رگ سے قریں تر

رسائی آپؐ کی قلبِ تپاں تک

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

لکھوں کوثؔری کیا میں کونسا قصہ ہے اب باقی
اک ایسے رہ نما آئے اک ایسے شہ سوار آئے
درِ سرکارؐ کی عظمت تو دیکھو
ہجر کے رنج و غم سہوں آقاؐ
آپؐ کا فیض عام ہوتا ہے
پہنچ سکتا نہیں گو آستاں پہ
مرے دل میں مری سرکارؐ کی بس یاد بستی ہے
مری سرکارؐ کا یہ آستاں ہے
’’ہم خاک اُڑائیں گے جو وہ خاک نہ پائی‘‘
’’با عطا تم، شاہ تم، مختار تم‘‘

اشتہارات