خیال میں بھی جو آئے ترے خیال کے رنگ

خیال میں بھی جو آئے ترے خیال کے رنگ

سخن کے اوج پہ چھائے ترے خیال کے رنگ

 

خزاں نے بابِ مقدر پہ جب بھی دستک دی

بہار بانٹتے آئے ترے خیال کے رنگ

 

نظر کی تاب سے ممکن نہ ہو سکی تدبیر

سو ہم نے دل میں سجائے ترے خیال کے رنگ

 

کہیں جمی جو کوئی محفلِ ثنا گوئی

بجائے شعر سُنائے ترے خیال کے رنگ

 

جہاں یقیں بھی ہو پہنائے عجز کا حاصل

گمان کیسے بتائے ترے خیال کے رنگ

 

وہاں وہاں پہ چمن زارِ زندگی مہکے

جہاں جہاں پہ بسائے ترے خیال کے رنگ

 

جو اور دل پہ نزولِ جمالِ حرف ہُوا

تو اور دل نے بڑھائے ترے خیال کے رنگ

 

قرار گاہِ مضامینِ نعت کی صورت

ہوں جیسے خواب سرائے ، ترے خیال کے رنگ

 

بہ رنگِ زادِ عنایت ، بہ شکلِ توشۂ خیر

عمل نے خوب کمائے ترے خیال کے رنگ

 

کریم ! خامۂ مقصودؔ کو ملے توفیق

کہ یہ سمیٹتا جائے ترے خیال کے رنگ

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ