دشت ہے کل جہاں سائباں آپ صلی اللہ علیک وسلم ہیں

دشت ہے کل جہاں سائباں آپ ﷺ ہیں

یا نبی ﷺ رحمتِ بیکراں آپ ہیں

 

قریۂ جاں منور ہوا آپ ﷺ سے

تیرگی میں مرے پاسباں آپ ﷺ ہیں

 

بے صدا عرصۂ آگہی کے لیے

حق و صدق وفا کی اَذاں آپ ﷺ ہیں

 

آپ ہیں واقفِ سرِّ توحید بھی

شاہدِ لمحۂ کن فکاں آپ ہیں

 

آپ ہیں طورِ عرفانِ انسانیت

منبعِ علم بھی بے گماں آپ ﷺ ہیں

 

ظلم کی دھوپ میں رحمتِ بحر و بر

ہیں تو انسانیت کی اماں آپ ہیں

 

سخت مشکل میں ہے اب عزیزؔ آپ ﷺ کا

یا نبیؐ ﷺ! والیِ بے کساں آپ ہیں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

باغِ ہستی میں ہےخوشبو آپﷺ کی مہکار سے
اے نائبِ رزّاقِ کریم، احسنِ تقویم
کُن سے ماقبل کے منظر کی ہے تطبیق الگ
نامۂ تخلیق پر نقشِ بقا، غارِ حِرا
ایک یہ بات ہے اصول کی بات
بنایا ہے حسیں پیکر خدا نے مشک و عنبر سے
ان کے در کا جس گھڑی سے میں گداگر ہوگیا
ارض و سما میں جگمگ جگمگ لحظہ لحظہ آپ کا نام
وہ جدا ہے راز و نیاز سے کہ نہیں نہیں بخدا نہیں
خوشبوؤں سے مہکنے لگی ہے فضا، لے کے اسلام خیرالوریٰ آ گئے