اردوئے معلیٰ

Search

 

دیارِ نور میں جناں کا باغ رکھ دیا گیا

یہیں صراطِ خلد کا سراغ رکھ دیا گیا

 

لٹا رہا ہے مدحتِ امامِ انبیاء کی ضو

مرے قلم میں ضوفشاں چراغ رکھ دیا گیا

 

سمجھ لیا نہ جانے اس کو عکسِ عارضِ نبی

اسی لئے رخِ قمر میں داغ رکھ دیا گیا

 

شرابِ عشقِ مصطفیٰ کی بوند کا سوال تھا

نظر سے ہو گئی بہم، ایاغ رکھ دیا گیا

 

گمان کیا گیا جمالِ بے پناہ کی طرف

ختن کا مشک در دل و دماغ رکھ دیا گیا

 

بروزِ مرگ ہو گیا ہے اہتمام وصل کا

لحد میں طولِ ہجر سے فراغ رکھ دیا گیا

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ