اردوئے معلیٰ

رائیگاں شعر مرے ، نوحہِ نمناک عبث

تُند خُو عشق اڑاتا ہے مری خاک عبث

 

آس کے طُور پہ اتری نہ تجلی کوئی

ٹکٹکی باندھ کے تکتے رہے افلاک عبث

 

لوچ مٹی میں سرے سے ہی نہیں ہے میری

گردشوں میں ہے زمانوں سے ترا چاک عبث

 

وحشتیں ہیں کہ ہر اک حال میں عریاں ٹھہریں

عقل بُنتی رہی تہذیب کی پوشاک عبث

 

چارہ گر ہے نہ رفو گر ہے نہ ہمدرد ہے وہ

دل دکھاتا ہے اسے دامنِ صد چاک عبث

 

عہدِ کم فہم میں مبعوث اگر کرنا تھا

تو نے بخشی ہے مجھے دولتِ ادراک عبث

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات