اردوئے معلیٰ

Search

سرزمینِ باولی فیضان ہی فیضان ہے

میرے خواجہ خانِ عالمؒ کا نگر ذیشان ہے

 

مرکزِ انوار بحرِ عشق طورِ سالکاں

یہ درِ دولت تصوف آگہی عرفان ہے

 

بارگاہِ مصطفی بس اک حوالہ آپ کا

بیعتِ ـعشقِ نبی ہی آپ کا عنوان ہے

 

نقشبندی فیض کے ابرِ کرم اتنا برس

دل کی کھیتی لہلہا اُٹھے بہت ویران ہے

 

پست فہموں اور طلب گارانِ دنیا کو حضور

نسبتِ دربار دینا آپ کا احسان ہے

 

’’یہ رہے نازاں مری نسبت پہ مولا بخش دے ‘‘

آپ کہہ دیں روزِ محشر بس یہی ارمان ہے

 

کوئی کیا اندازہ کر سکتا ہے تیرے اوج کا

تیرے درویشوں پہ بھی چشمِ فلک حیران ہے

 

اے فنائے عشقِ آقا اے بقا کے راہبر

جو ترے قدموں میں آجائے وہی سلطان ہے

 

استقامت ہو درود و ذکر اور اخلاص میں

خادمینِ باولی کو بس یہی فرمان ہے

 

اِس شکیلِؔ نقشبندی پر عطائے خاص ہو

سائلِ در ہے تمہارا یہ بھی اِک درباں ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ