اردوئے معلیٰ

Search

سہل ہے راستہ محمد کا

جل رہا ہے دِیا محمد کا

 

بے یقینی کے ان اندھیروں میں

سب کو ہے آسرا محمد کا

 

نعرہء حق کی گونج ہے ہر سو

دور پھر آ گیا محمد کا

 

جل اٹھے پھر چراغ منزل کے

بادباں کھل گیا محمد کا

 

شب کی تاریک راہ میں اب بھی

نور ہے جا بجا محمد کا

 

جس طرف سے بھی ہو چلے آؤ

ہے ہر اک راستہ محمد کا

 

پرچم سبز کھل گۓ ہر سو

چل پڑا قافلہ محمد کا

 

ہے ہواؤں کے ہاتھ پر دیکھو

نام لکھا ہوا محمد کا

 

کفر کی رات ڈھل گئی پاشیؔ

دیکھ پھر دن ہوا محمد کا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ