اردوئے معلیٰ

شبِ ازل دمِ اعجاز کُن فکاں تجھ سے

شبِ ازل دمِ اعجاز کُن فکاں تجھ سے

ضمیرِ ہست میں نقشِ طلسمِ جاں تجھ سے

 

دھڑک رہا ہے اگر دل تو اِذن ہے تیرا

حریمِ جاں میں جو گونجی ہے تو اذاں تجھ سے

 

حطیمِ فکر جو روشن ہے تیرے نام سے ہے

مرے دہن میں ہے گویا تو یہ زباں تجھ سے

 

ترے سبب ہیں جزا و سزا کے سب قصے

امید و بیم کی ہر ایک داستاں تجھ سے

 

مرے تمام ارادوں میں تیری مرضی ہے

مرے ہر ایک عمل کا ہے امتحاں تجھ سے

 

مرے گمان کے ہر مرحلے کا تو رہبر

مرے یقین کی منزل کا ہر نشاں تجھ سے

 

تمام فکر و تفکر کی انتہا تُو ہے

تمام حرف و حکایت ہے درمیاں تجھ سے

 

مکاں کی حد بھی تصور سے میرے باہر ہے

میں کیا کہوں متصور ہے لامکاں تجھ سے

 

یہ ہست و بود کی نیرنگیاں پکارتی ہیں

بہار تجھ سے ، خزاں تجھ سے ، گلستاں تجھ سے

 

بسانِ بسترِ سنجاب ، آتشِ نمرود

بشاخِ برق ، یہ توفیقِ آشیاں تجھ سے

 

تری رضا سے بشر عرشِ پاک پر پہنچا

زمیں سے تا بفلک طرحِ نردباں تجھ سے

 

وہ ذاتِ خاص جسے تو نے فیضِ قرب دیا

فنا پذیر تھی ، لیکن ہے جاوداں تجھ سے

 

کہاں ہے راکبِ نوری جو رات گزرا تھا

سوال بن کے مخاطب ہے کہکشاں تجھ سے

 

مرے شرف کے لیے کیا یہ مرتبہ کم ہے

فلک پہ جا کے ہو انسان ہمزباں تجھ سے

 

ظن و گماں کی تمازت سے ہو گیا ثابت

مرے یقین کا محفوظ سائباں تجھ سے

 

سپاسِ ہدیۂ جاں ہو ادا تو کیسے ہو

بغیر مانگے جو پاؤں یہ ارمغاں تجھ سے

 

طلوعِ صبح ، اندھیروں میں آرزو تیری

مری تلاش کا ہر گنجِ شائگاں تجھ سے

 

ترے جہان میں خوشبو تری تو ہے لیکن

نجانے دور ہے کتنا ترا مکاں تجھ سے

 

تمام جسم میں گردش تری لہو ، بن کر

چھلک رہا ہے یہ لیوانِ ارغواں تجھ سے

 

مرے خیال کو تجھ سے مفر نہیں ہر گز

زمیں بھی مری تجھ سے ہے ، آسماں تجھ سے

 

ہے میرے شوق کو مہمیز ، بندگی تیری

مرے نیاز کی جولانیاں جواں تجھ سے

 

ترا کرم کہ ہوا ہے مکاں مکاں مجھ پر

مرے گلے کہ رہے ہیں زماں زماں تجھ سے

 

میں اپنی کون سی مشکل کروں عیاں تجھ پر

مرے خیال کا در ، کون سا نہاں تجھ سے

 

میں اپنا نفس گزیدہ ، سکونِ دل کے لیے

ہجومِ کرب میں مانگوں تو بس اماں تجھ سے

 

تمام عمر تری پیشگاہ میں گزری

خدا ہی جانے ملوں گا تو اب کہاں تجھ سے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ