اردوئے معلیٰ

Search

شبِ سیاہ میں پُرنور ماہِ تام آیا

پیامِ رب لیے نبیوں کا وہ امام آیا

 

انہی کی نعت ہے آیاتِ میں بھی جلوہ فشاں

انہی کی شان میں اللہ کا کلام آیا

 

لیا جو نامِ محمد تو ٹل گئی مشکل

یہی وسیلہ مری مشکلوں میں کام آیا

 

نبی کی یاد میں گزری ہے زندگی ساری

انہی کا ذکر مرے لب پہ صبح و شام آیا

 

ہے شہرِ نور یہاں سر کے بل چلے آؤ

نظر جھکا لو ادب کا ہے اب مقام آیا

 

بلا رہے تھے تجھے ناز حاضری کے لئے

سحر کے وقت مدینے سے یہ پیام آیا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ