شہرِ طیبہ کا ہے دیوانہ نہ جانے کب سے

شہرِ طیبہ کا ہے دیوانہ نہ جانے کب سے

دل کہ ڈھونڈے، وہیں جانے کے بہانے کب سے

اب تو سرکار ! مسلمان پہ ہو چشمِ کرم

میٹ دینے کو ہی درپے ہیں زمانے کب سے

کوئی دیدار کی صورت نکل آئے آقا !

موت بھی تاک میں بیٹھی ہے سرہانے کب سے

اپنے اعمال کی پاداش میں رسوا ہیں سبھی

گا رہے تھے یہ شفاعت کے ترانے کب سے

وہ جو بھولے تھے ترا نقشِ کفِ پا آقا !

ہو چکے نقش بہ دیوار نہ جانے کب سے

 

یاسیت ہی کی رِدا سر پہ مسلمان کے ہے

عزم کے دیپ بجھا ڈالے ہوا نے کب سے

ہم نے دیکھا ہی نہیں عہدِ درخشاں آقا !

ہم تو اِدبار کے سنتے ہیں فسانے کب سے

ہے نحوست ہی مکافاتِ عمل کی ہر سو

آس کی شمع، لگے آپ بجھانے کب سے

دل تو کڑھتا ہے مگر راہ نہیں ملتی ہے

آ سکا کوئی نہ گرتوں کو اُٹھانے کب سے

استغاثہ یہ مری سمت سے اس قوم کا ہے

جس کی مظلومی پہ روتے ہیں زمانے کب سے

یا نبی ! اب تو ہو تقدیر بدلنے کی دعا

غیر محفوظ ہیں اُمت کے ٹھکانے کب سے

بت پرستوں کی صفوں میں بھی ہے مسلم شامل

مار ڈالا اسے کافر کی ادا نے کب سے

اب عزیزؔ احسنِ مضطر کا مُداوا کچھ ہو!

غل مچا رکھا ہے اس نوحہ سرا نے کب سے

 

نعت بصورتِ استغاثہ;ہفتہ: ۱۱؍صفر۱۴۳۸ھ… مطابق: ۱۲؍نومبر۲۰۱۶ء
یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

جیسے چُھپ جاتی ہے تیرہ شب سحر کے سامنے
کرم کے بادل برس رہے ہیں
اے خوشا آندم کہ گردم مست بایت یا رسول
ہجر تیرا مجھر اچھا نہیں ہونے دے گا
چراغ ِ عشق جلا ہے ہمارے سینے میں
جہاں تیرا نقشِ قدم دیکھتے ہیں
اے شہ انس و جاں جمال جمیل
گو ترقی پہ جمالِ مہِ کامل ہووے
حق نے تجھ کو بادشاہ ِ انس و جاں پیدا کیا
اصحاب یوں ہیں شاہِ رسولاں کے اردگرد

اشتہارات