اردوئے معلیٰ

Search

صد شُکر کہ ہم نعت سے منسوب ہُوئے ہیں

غالب سے سخنور جہاں مغلوب ہُوئے ہیں

 

جو آپ سے پہلے تھے وہ سب خاص و چُنیدہ

اے ختمِ رسل ! آپ تو محبوب ہُوئے ہیں

 

وہ چاند ستارے تھے، رہے شب میں فروزاں

اِک مہر کا آنا تھا کہ محجوب ہُوئے ہیں

 

کیا صُحبت و نسبت کا تھا فیضانِ تغیّر

جو عام تھے وہ خاص سے پھر خُوب ہُوئے ہیں

 

مدحت کے سُخن زار کے شایاں کہوں جن کو

وہ شعر ہُوئے ہیں نہ وہ اسلوب ہُوئے ہیں

 

بھیج ان کی طرف پھر سے کوئی خواب مسیحا

جو لوگ ترے ہجر کے مصلوب ہُوئے ہیں

 

بخشے مجھے سرکار نے بُوصیری کے صدقے

جب حرف، ثنا کے مجھے مطلوب ہُوئے ہیں

 

لایا ہُوں ترے در پہ، شفاعت کی نظر کر

اعمال کے دفتر مرے معیوب ہُوئے ہیں

 

مدحت نے نوازے ہیں نئے رنگ کے منظر

موسم مرے حرفوں کے بھی مرطوب ہُوئے ہیں

 

ممکن ہو تو اب نعت، کوئی خامشی سوچے

مقصودؔ سُخن جتنے تھے، مرعوب ہُوئے ہیں

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ