اردوئے معلیٰ

Search

ضربِ تیشہ سے یوں اعجاز کی صورت جاگے

سینۂ سنگ سے اک موم کی مورت جاگے

 

ٹوٹ جائے مرے مولا یہ جمودِ شب تار

کوکبِ بخت چمک جائے مہورت جاگے

 

کاش پڑ جائے مرے غم پہ ہُما کا سایا

شعلۂ درد سے عنقا کسی صورت جاگے

 

خواہش حرف ستائش کو تھپک دو ورنہ

بن کے اکثر یہ نمائش کی ضرورت جاگے

 

بے غرض ہو جو تعلّق تو کبھی دل میں ظہیرؔ

نفرتیں شور مچائیں نہ کدُورت جاگے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ